حکومت کے آخری 9 ماہ میں مجھے کس نے آف ایئر کرایا تھا ؟حامد میر، تبصرے

shifa-nad-hamid-khan.jpg


نجی چینل جیو سے منسلک معروف اینکر پرسن و تجزیہ کار حامد میر نے خود کو آف ایئر کرنے کا سوال ایک بار پھر اٹھایا تو دیگر صحافیوں نے دلچسپ تبصرے کیے اور کہا کہ وہ خود فیصلہ نہیں کر سکے کہ کس نے اور کیوں آف ایئر کرایا تھا۔

تفصیلات کے مطابق حامد میر نے مائیکرو بلاگنگ ویب سائٹ ٹوئٹر پر ٹوئٹ میں کہا کہ عمران خان نے ایک بار پھر اپنی حکومت کے خلاف اٹھنے والی تحریک میں میڈیا کو غیر ملکی سازش کا حصہ قرار دیا ہے۔ مگر میرا سوال بڑا سیدھا سا ہے کہ انکی حکومت کے آخری 9 ماہ میں مجھے کس نے آف ایئر کرایا تھا۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ میں صحافیوں پر حملوں کی مخالفت کرتا تھا۔ عمران خان کو بتانا چاہیے یہ حملے کون کرتا تھا اور مجھ پر پابندی کس نے لگائی۔

اس ٹوئٹ کے بعد صحافیوں کے تبصرے کرنا شروع کر دیئے اور طارق متین نے کہا کہ سر ، آپ خود فیصلہ نہیں کر سکے، کبھی کہا کہ عمران خان کی اوقات نہیں تھی۔ آپ کے ویڈیو بیانات اور آرٹیکلز گواہ ہیں ۔ جس تقریر کے بعد لگی وہ کیا عمران خان کے خلاف تھی۔


شفایوسفزئی نے حامد میر کے ایک ویڈیو بیان کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ جب آپ لوگوں کو قائل نہ کر سکیں تو ان کو کنفیوز کر دیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ جو سوال میر صاحب عمران خان سے پوچھ رہے ہیں۔ اس کا جواب وہ کچھ عرصہ قبل خود ہی دے چکے ہیں۔


سعید بلوچ نے بی بی سی کو دیئے گئے ان کی انٹرویو کا حوالہدیتے ہوئے کہا کہ میر صاحب اس وڈیو میں آپ نے بی بی سی اردو سے اپنے نکالے جانے بارے کچھ کہا تھا۔

اگر آپ کو علم نہیں تھا کہ اسد طور پر حملہ کس نے کرایا تھا تو آپ نے جنرل فیض پر الزامات کیوں لگائے اور انکی کردار کشی کیوں کی؟

 
Advertisement
Last edited by a moderator:

miafridi

Prime Minister (20k+ posts)
Lifafa Mir always contradict himself. This happens when you try to shape a narrative for lifafa rather than talking facts.

امپورٹڈ_حکومت_نامنظور
 

Nice2MU

Prime Minister (20k+ posts)
اس غدار اور کذاب کو تو آف لائف کرنا چاہیے۔۔۔

ویسے اب ویسے ہی اپنے اپکو ریلیونٹ رکھنے کے لیے ایسی درفنطنیاں چھوڑ رہا ہوتا ہے کہ میں بھی ابھی موجود ہوں۔۔
 

amber123

Chief Minister (5k+ posts)
جب بکواس کرنے کو کچھ نئیں ہوتا تو اپنی کہانی سنانے لگ جاتا ہے۔۔۔۔ تم اہم نہیں ہو
 
Sponsored Link