دعا زہرا کی واپسی پر فنکار برادری خوش،والدین کو مشورے بھی دے ڈالے

6duazehrashowbizradaml.jpg


کراچی سے لاپتہ ہونے والی دعا زہرہ منظر عام پر آئی تو پاکستان بھر کے عوام نے سکھ کا سانس لیا,شوبز فنکاروں نے بھی خوشی کا اظہار کیا۔

اداکارہ نور بخاری نے انسٹا گرام پر اسٹوری شیئر کی جس پر دعا زہرہ کی بازیابی اور اس کے صحیح سلامت ہونے پر خدا کا شکر اداکرتے ہوئے لکھا ’’بیٹا کاش آپ سمجھ سکتیں کہ آپ کے والدین اور پورا پاکستان کس اذیت سے گزرا۔

نور بخاری نےلکھا کہ ہم نے آپ کے لیے بہت دعائیں کیں‘‘۔ نور بخاری نے والدین کو مشورہ دیا کہ مہربانی کرکے اپنے بچوں کی سنیں، اور بچوں کو نصیحت کی کہ بھاگ کر شادی کرنے میں کوئی عزت نہیں۔

0-noor-1651039475.jpg


اداکارہ سجل علی نے کہا کہ انہیں لگتا ہے کہ بچوں کے ساتھ ہمیں والدین کو بھی سکھانا چاہئے کہ انہیں بچوں کے ساتھ کس طرح پیش آنا چاہیے۔ والدین کو ہفتے میں کلاسز لینی چاہئیں کہ بچوں کے ساتھ کیسے رہا جائے۔

0-sajal-1651039569.jpg


اداکارہ یمنیٰ زیدی نے سندھ اور پنجاب حکومت سے دعا زہرہ کے والدین کے ساتھ بھرپور تعاون کرنے کی درخواست کی۔ انہوں نے لکھا کہ یہ لڑکی بڑی مشکل میں لگ رہی ہے۔


اداکارہ متھیرا نے دعا زہرہ کے انتہائی قدم اٹھانے پر سخت برہم ہوئیں,متھرا نے لکھا کہ میں نے پہلے ہی کہا تھا یہ لڑکیاں ڈراما ہیں انہیں شرم آنی چاہئے توبہ ہے۔ انہوں نے لڑکیوں کو سمجھداری کا مظاہرہ کرنے کا بھی مشورہ دیا۔

0-mathira-1651039523.jpg


16 اپریل کو کراچی کے علاقے الفلاح گولڈن ٹاؤن سے مبینہ طور پر 14 سالہ دعا زہرہ لاپتہ ہوئی تھی, منظر عام پر آنے کے بعد دعا نے پولیس کو دئیے گئے بیان میں کہا ہے کہ اسے کسی نے اغوا نہیں کیا تھا بلکہ اس نے اپنی مرضی سے لاہور کے رہائشی ظہیر احمد نامی لڑکے سے شادی کی ہے اس کے علاوہ اس کی عمر 14 سال نہیں بلکہ 18 سال ہے۔


انسپکٹر جنرل پولیس سندھ مشتاق مہر نے کیپٹل سٹی پولیس آفس لاہور کی لیگل برانچ میں تعینات ہیڈ کانسٹیبل کو دعا زہرا کاظمی کے کیس میں حاضر دماغی پر ایک لاکھ روپے نقد انعام اور سرٹیفکیٹ دینے کا اعلان کیا ہے۔

بکل نمبر 12381 کے حامل ہیڈ کانسٹیبل نے لاہور کی متعلقہ عدالت میں دعا زہرا کی موجودگی سے متعلق اطلاع بروقت اپنے سینئر پولیس آفیسر کو دی جس سے لڑکی کا سراغ لگانے میں مدد ملی۔
 
Advertisement
Last edited by a moderator:
Sponsored Link