یوم آزادی کی مرکزی تقریب میں نامناسب رقص،سوشل میڈیا صارفین کاسخت ردعمل

11namunasibdance.jpg

پاکستان کے75ویں یوم آزادی کے موقع پر اسلام آباد میں منعقد کردہ مرکزی تقریب میں رقص کی محفل شامل کرنے پر حکومت کو سوشل میڈیا پرشدید تنقید کا سامنا ہے۔

تفصیلات کےمطابق وزارت اطلاعات و نشریات کی جانب سےجناح کنونشن سینٹر اسلام آباد میں پرچم کشائی کی مرکزی تقریب کا اہتمام کیا گیا تھا جس میں وزیراعظم شہباز شریف سمیت اعلی حکومتی شخصیات نےشرکت کی،اس تقریب میں ایک موقع پر ڈانس پرفارمنس بھی شامل کی گئی تھی جس میں مرد وخواتین ڈانسرز نے اپنے فن کا مظاہرہ کیا۔


تاہم اس سیگمنٹ کی ویڈیو ٹویٹر پروائرل ہوئی اور حکومت کیلئے شدید تنقید کی وجہ بن گئی، پی ٹی آئی کے رہنماؤں سمیت ٹویٹر صارفین نے حکومت کو آڑےہاتھوں لیتے ہوئے یوم آزادی کے موقع پر ڈانس کی محفل منعقد کرنے پر خوب تنقید کی۔

سابق وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات فواد چوہدری نے کہا کہ وزارت اطلاعات و نشریات نے آزادی کی تقریبات کیلئے حکومت سے 75کروڑ روپے کے فنڈز لیےمگر تقریبات کا معیار انتہائی سطحی بلکہ شرمناک تھا۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہماری حکومت نے نوجوان افسران کو یہ ٹاس سونپا تھا جنہوں نے دن رات محنت کرتے ہوئے پلان تیار کیا تھا، مگر حیرانگی کی بات ہےکہ حکومت نے ان کی تجاویز نظرا نداز کردیں۔


اظہر مشہوانی نے کہا کہ پرچم کشائی کی تقریب ہمیشہ باوقار رہی ہے مگر اس بار حکومت چھچھوروں کے ہاتھ آئی ہوئی ہے،تہذیب و اقدار سے ان کا کیا لینا دینا۔


سیاستدانوں کےعلاوہ صحافیوں نے بھی حکومت کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا،انوار لودھی نے اس عمل کو جوکروں کا جوک کہتے ہوئے شرمناک قرار دیدیا۔


طارق متین نے طنز کرتے ہوئے کہا کہ یہ اڈا پلاٹ سےتھوڑاساآگے ایک صوبہ ہے وہاں کی ثقافت ہے۔


احتشام الحق نے کہا کہ مجروں کے عادی لوگ اختیارات ملنے پر یہی کرتے ہیں۔


ٹویٹرصارفین نے بھی پرچم کشائی کی تقریب میں ڈانس کی محفلیں شامل کرنے کی شدید مذمت کی۔



 
مریم اورنگزیب اور فہد حسین نے چودہ اگست کے موقعہ پر ہندوستانی/یورپین طرز کے ڈانس کیوں منعقد کرواۓ؟
کیا انہیں نہیں پتہ تھا کہ لوگوں کی طرف سے ریکشن آے گا؟
جناب، انہیں سب پتہ ہے! عوام تو پہلے ہی ان کے ساتھ نہیں. یہ سب کچھ تو آقاؤں کو خوش کرنے کے لئے کیا گیا تھا
 
Sponsored Link