حمزہ شہباز کے فوٹوسیشن نے زیادتی کا شکار لڑکی کی شناخت ظاہرکردی

photi1i11.jpg


گزشتہ دنوں پتوکی میں ڈکیتی کے دوران ڈاکوؤںنے 15 سال کی لڑکی کو زیادتی کا نشانہ بنادیا جس پر حمزہ شہباز متاثرہ خاندان کے گھر پہنچ گئے

وزیراعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز نے متاثرہ خاندان سے ان کے گھر جاکر ملاقات کی اور متاثرہ خاندان کی ویڈیو بناکر سوشل میڈیا پر شئیر کردی جس سے متاثرہ خاندان کی شناخت ظاہر ہوگئی۔

ن لیگی سوشل میڈیا اکاؤنٹ نے لڑکی،اسکے والد کی تصاویر، نام اور دیگر شناخت بھی ظاہر کردی جس پر سوشل میڈیا پر حمزہ شہباز پر کڑی تنقید کی جارہی ہے۔


سوشل میڈیا صارفین کا کہنا تھا کہ موٹروے ریپ کیس میں پولیس اور میڈیا نے متاثرین کی شناخت ظاہر نہیں کی اور متاثرہ خاتون کو انصاف بھی مل گیا جبکہ حمزہ شہباز نے ڈرامہ بازی اور واہ واہ کرانے کیلئے ایک غریب خاندان کی رہی سہی عزت بھی نیلام کروادی۔
096b10ff-f3e9-42ab-a1d8-7def4969b11c.jpg


ان کا مزید کہنا تھا کہ اگر لڑکی کو انصاف دینا ہوتا تو اپنے دفتر سے بھی حکم جاری کرکے دے سکتا تھا، اگر لڑکی کے گھر جانا ہی تھا تو کم از کم ویڈیوز جاری کرکے انکی شناخت ظاہر نہ کرتے، انکی عزت تو رہنے دیتے۔ ڈاکووؤں نے جو ظلم کیا سو کیا، حمزہ شہباز نے اس سے بھی بڑا ظلم کیا ہے۔

سوشل میڈیا صارفین کا کہنا تھا کہ ایک لڑکی کیساتھ ظلم ہوا اور حمزہ شہباز ڈرامہ کرنے کیلئے اسکے گھر پہنچ گیا اور یہ تک دکھادیا کہ کونسی لڑکی زیادتی کا نشانہ بنی ہے۔ اگر داد رسی ہی کرنا تھی تو ویڈیو شئیر کرکے لڑکی اور اسکے گھر والوں کی شناخت ظاہر کرنیکی کیا ضرورت تھی؟

ان کا کہنا تھا کہ حمزہ شہباز نے تو اپنی پبلسٹی کی خاطر زیادتی کا شکار لڑکی کی تشہیر کردی۔ یہ کونساانصاف ہے؟ ڈاکوؤں سے زیادہ ظلم تو حمزہ شہباز نے کیا ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ جو غریب کی بچی کھچی عزت تھی وہ تو رہنے دیتے، اپنی ڈرامہ بازی اور فوٹوسیشن کیلئے رہی سہی عزت بھی خاک میں ملادی

واضح رہے کہ اس سے قبل حمزہ شہباز کے والد وزیراعظم شہبازشریف بھی ایسے کام کرتے رہے ہیں، 2014 میں ساہیوال زیادتی کیس میں شہبازشریف متاثرہ لڑکی کے گھر پہنچ گئیے تھے جس کی وجہ سے لڑکی کی شناخت ظاہرہوگئی تھی
Clipboard12.jpg


اس دوران شہبازشریف نے میڈیا کو بلاکر پولیس افسران کو معطل کردیا تھا ، ملزمان تو گرفتار ہوئے لیکن اسکے بعد کیس کا کیا بنا، یہ آج تک معلوم نہیں ہوسکا
 
Advertisement

thinking

Prime Minister (20k+ posts)
Is ka kanjar baap Showbaz bhi yaheeh kam karta tha.Dosro ki betio ki izzat ko media m dikhana.
Jab apni Behan ya beti ghar se bhaag jaya kisi k sath tu itna parda rakhtay hain k kisi ko kano kaan khabar nahi honay detay..Kiyo k apni izzat ka matter hota ha..SC CJ.ko is par action lena chahay k jab dako ye juram kar rehay they tu police kahan thi??lekan sharefo ko muamla ha is lia judges bhi chup rehay gein.
 

Aliimran1

Chief Minister (5k+ posts)

Yeh kanjar khandan hai ———- Jo khud beghairat ho usay kya pata kah izat kya chez hoti hai ?​

Gashti Farari aur iss ki maa har roaz Garage mein shouqiya yeh kaam karti rehain hein inhein izat lotnay ka kya pata? 🤔 😡

 

MSUMAIRZ

MPA (400+ posts)
If you observe the pose of HSS in main photo, do you thonk he looks normal. He seems to be mocking them for his gains. Just look at his face.
 

انقلاب

Senator (1k+ posts)
photi1i11.jpg


گزشتہ دنوں پتوکی میں ڈکیتی کے دوران ڈاکوؤںنے 15 سال کی لڑکی کو زیادتی کا نشانہ بنادیا جس پر حمزہ شہباز متاثرہ خاندان کے گھر پہنچ گئے

وزیراعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز نے متاثرہ خاندان سے ان کے گھر جاکر ملاقات کی اور متاثرہ خاندان کی ویڈیو بناکر سوشل میڈیا پر شئیر کردی جس سے متاثرہ خاندان کی شناخت ظاہر ہوگئی۔

ن لیگی سوشل میڈیا اکاؤنٹ نے لڑکی،اسکے والد کی تصاویر، نام اور دیگر شناخت بھی ظاہر کردی جس پر سوشل میڈیا پر حمزہ شہباز پر کڑی تنقید کی جارہی ہے۔


سوشل میڈیا صارفین کا کہنا تھا کہ موٹروے ریپ کیس میں پولیس اور میڈیا نے متاثرین کی شناخت ظاہر نہیں کی اور متاثرہ خاتون کو انصاف بھی مل گیا جبکہ حمزہ شہباز نے ڈرامہ بازی اور واہ واہ کرانے کیلئے ایک غریب خاندان کی رہی سہی عزت بھی نیلام کروادی۔
096b10ff-f3e9-42ab-a1d8-7def4969b11c.jpg


ان کا مزید کہنا تھا کہ اگر لڑکی کو انصاف دینا ہوتا تو اپنے دفتر سے بھی حکم جاری کرکے دے سکتا تھا، اگر لڑکی کے گھر جانا ہی تھا تو کم از کم ویڈیوز جاری کرکے انکی شناخت ظاہر نہ کرتے، انکی عزت تو رہنے دیتے۔ ڈاکووؤں نے جو ظلم کیا سو کیا، حمزہ شہباز نے اس سے بھی بڑا ظلم کیا ہے۔

سوشل میڈیا صارفین کا کہنا تھا کہ ایک لڑکی کیساتھ ظلم ہوا اور حمزہ شہباز ڈرامہ کرنے کیلئے اسکے گھر پہنچ گیا اور یہ تک دکھادیا کہ کونسی لڑکی زیادتی کا نشانہ بنی ہے۔ اگر داد رسی ہی کرنا تھی تو ویڈیو شئیر کرکے لڑکی اور اسکے گھر والوں کی شناخت ظاہر کرنیکی کیا ضرورت تھی؟

ان کا کہنا تھا کہ حمزہ شہباز نے تو اپنی پبلسٹی کی خاطر زیادتی کا شکار لڑکی کی تشہیر کردی۔ یہ کونساانصاف ہے؟ ڈاکوؤں سے زیادہ ظلم تو حمزہ شہباز نے کیا ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ جو غریب کی بچی کھچی عزت تھی وہ تو رہنے دیتے، اپنی ڈرامہ بازی اور فوٹوسیشن کیلئے رہی سہی عزت بھی خاک میں ملادی

واضح رہے کہ اس سے قبل حمزہ شہباز کے والد وزیراعظم شہبازشریف بھی ایسے کام کرتے رہے ہیں، 2014 میں ساہیوال زیادتی کیس میں شہبازشریف متاثرہ لڑکی کے گھر پہنچ گئیے تھے جس کی وجہ سے لڑکی کی شناخت ظاہرہوگئی تھی
Clipboard12.jpg


اس دوران شہبازشریف نے میڈیا کو بلاکر پولیس افسران کو معطل کردیا تھا ، ملزمان تو گرفتار ہوئے لیکن اسکے بعد کیس کا کیا بنا، یہ آج تک معلوم نہیں ہوسکا
Both motgerfcker father son duo are a bunch of sexual deviant themselves.
 

Mughal1

Chief Minister (5k+ posts)
agar haraami logoon ko aqal hoti to kia woh haraami hote aur haraami pan dikhaate? her giz nahin. sab bedeen log aik hi category ke hen see HERE.
 

M.Tariq

MPA (400+ posts)
IN Barwoon ko ye b nahi pata k is qisam k victom ki tasveer shaya nahi karte,Allah Mazloomo ki madad farmai.
 

karachiwala

Chief Minister (5k+ posts)

گیدڑ کی کھال پہننے سے کوئی نواز شریف نہیں بن جاتا اس کے واسطے خون میں بے غیرتی کا ہونا ضروری ہے
 
Sponsored Link