قرآن کا حکم! منافقین کا پراپیگنڈہ : خاتون کے حجاب کی اصل حقیقت اُنکی زبانی

Dr Adam

Chief Minister (5k+ posts)
سورۃ الاعراف کی آیت ٢٦ میں ارشاد ربانی ہوتا ہے

يَا بَنِىٓ اٰدَمَ قَدْ اَنْزَلْنَا عَلَيْكُمْ لِبَاسًا يُّوَارِىْ سَوْاٰتِكُمْ وَرِيْشًا ۖ وَلِبَاسُ التَّقْوٰى ذٰلِكَ خَيْـرٌ ۚ ذٰلِكَ مِنْ اٰيَاتِ اللّـٰهِ لَعَلَّهُـمْ يَذَّكَّرُوْنَ


ترجمہ: اے آدم کی اولاد ہم نے تم پر پوشاک اتاری جو تمہاری شرم گاہیں ڈھانکتی ہے اور آرائش کے کپڑے بھی اتارے، اور پرہیزگاری کا لباس وہ سب سے بہتر ہے، یہ اللہ کی قدرت کی نشانیاں ہیں تاکہ وہ نصیحت حاصل کریں



 
Advertisement
Last edited by a moderator:

asallo

Senator (1k+ posts)
Hai bechare indian goons iis week main do dafa un ke sath buhat buri hoi hai. Eik to woh jo indian Olympian ne ki hai doosri iis ladki ne ker di tars aata hai aaj kaan to becharoon per
 

brohiniaz

Minister (2k+ posts)
جزاک اللہ خیرا ، بہت ہی محترم ڈاکٹر صاحب اس میں اگر سورہ الاحزاب کی آیہ نمبر ۵۹ ا کا اضافہ کریں تو احکام خداوندی واضح ہو جائیں گے

أَعُوذُ بِاللَّهِ مِنَ الشَّيْطَانِ الرَّجِيمِ
بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

يٰٓاَيُّهَا النَّبِيُّ قُلْ لِّاَزْوَاجِكَ وَبَنٰتِكَ وَنِسَاۗءِ الْمُؤْمِنِيْنَ يُدْنِيْنَ عَلَيْهِنَّ مِنْ جَلَابِيْبِهِنَّ ۭ ذٰلِكَ اَدْنٰٓى اَنْ يُّعْرَفْنَ فَلَا يُؤْذَيْنَ ۭ وَكَانَ اللّٰهُ غَفُوْرًا رَّحِيْمًا

اے نبی ﷺ ! اپنی بیویوں اور بیٹیوں اور اہل ِ ایمان کی عورتوں سے کہہ دو کہ اپنے اوپر اپنی چادروں کے پلوّ لٹکا لیا کریں۔یہ زیادہ مناسب طریقہ ہے تاکہ وہ پہچان لی جائیں اور نہ ستائی جائیں۔ اللہ تعالیٰ غفور و رحیم ہے


اصل الفاظ ہیں یُدْ نِیْنَ عَلَیْھِنَّ مِنْ جَلَا بِیْبَھِنَّ۔ جلباب عربی زبان میں بڑی چادر کو کہتے ہیں۔ اور اِدْنَاء کے اصل معنی قریب کرنے اور لپیٹ لینے کے ہیں ، مگر جب اس کے ساتھ عَلیٰ کا صلہ آئے تو اس میں اِرْ خَاء، یعنی اوپر سے لٹکا لینے کا مفہوم پیدا ہو جاتا ہے۔ موجودہ زمانے کے بعض مترجمین و مفسّرین مغربی مذاق سے مغلوب ہو کر اس لفظ کا ترجمہ صرف ’’لپیٹ لینا ‘‘ کرتے ہیں تاکہ کسی طرح چہرہ چھپانے کے حکم سے بچ نکلا جائے۔ لیکن اللہ تعالیٰ کا مقصود اگر وہی ہوتا جو یہ حضرات بیان کرنا چاہتے ہیں تو وہ یُدْ نَیْنَ اِلَیْھِنَّ فرماتا۔ جو شخص بھی عربی زبان جانتا ہو کبھی یہ نہیں مان سکتا کہ یُدْ نِیْنَ عَلَیْھِنَّ کے معنی محض لپیٹ لینے کے ہو سکتے ہیں ۔ مزید براں مِنْ جَلَا ئِیْبِھِنّ کے الفاظ یہ معنی لینے میں اور زیادہ مانع ہیں۔ ظاہر ہے کہ یہاں مِن تعبیض کے لیے ہے ، یعنی چادر کا ایک حصّہ۔ اور یہ بھی ظاہر ہے کہ لپیٹی جائے گی تو پوری چادر لپیٹی جائے گی نہ کہ اس کا محض ایک حصہّ۔ اس لیے آیت کا صاف مفہوم یہ ہے کہ عورتیں اپنی چادریں اچھی طرح اوڑھ لپیٹ کر اُن کا ایک حصہّ ، یا ان کا پلّو اپنے اوپر سے لٹکا لیا کریں ، جسے عرفِ عام میں گھونگھٹ ڈالنا کہتے ہیں۔
یہی معنی عہدِ رسالت سے قریب ترین زمانے کے اکابر مفسّرین بیان کرتے ہیں۔ ابن جریر اور ابن المنذر کی روایت ہے کہ محمد بن سَیرین ؒ نے حضرت عُبَیدۃ السّلمانی سے اس آیت کا مطلب پوچھا۔ (یہ حضرت عُبیدہ نبی صلی اللہ علیہ و سلم کے زمانے میں مسلمان ہو چکے تھے مگر حاضِر خدمت نہ ہو سکے تھے۔ حضرت عمرؓ کے زمانے میں مدینہ آئے اور وہیں کے ہو کر رہ گئے۔ انہیں فقہ اور احا میں قاضی شُریح کا ہم پلّہ مانا جاتا تھا )۔ اُنہوں نے جواب میں کچھ کہنے کے بجائے اپنی چادر اٹھائی اور اسے اس طرح اوڑھا کہ پورا سر اور پیشانی اور پورا منہ ڈھانک کر صرف ایک آنکھ کھُلی رکھی۔ ابن عباس بھی قریب قریب یہی تفسیر کرتے ہیں۔ اُن کے جو اقوال ابنِ جریر۔ ابنِ ابی حاتم اور ابن مَرْدُوْیہَ نے نقل کیے ہیں ان میں وہ کہتے ہیں ’’ اللہ تعالیٰ نے عورتوں کو حکم دیا ہے کہ جب وہ کسی کام کے لیے گھروں سے نکلیں تو اپنی چادروں کے پلّو اوپر سے ڈال کر اپنا منہ چھپا لیں اور صرف آنکھیں کھلی رکھیں۔‘‘ یہی تفسیر قَتادہ اور سُدِّی نے بھی اس آیت کی بیان کی ہے۔
عہد صحابہ و تابعین کے بعد جتنے بڑے بڑے مفسّرین تاریخ اسلام میں گزرے ہیں انہوں نے بالا تفاق اس آیت کا یہی مطلب بیان کیا ہے۔ امام بنِ جریر طَبَرِی کہتے ہیں :’’یُدْنِیْنَ عَلَیْھِنَّ مَنْ جَلَا بِیْبِھِنَّ، یعنی شریف عورتیں اپنے لباس میں لونڈیوں سے مشابہ بن کر گھروں سے نکلیں کہاں کے چہرے اور سر کے بال کھُلے ہوئے ہوں ، بلکہ انہیں چاہیے کہ اپنے اوپر اپنی چادروں کا ایک حصّہ لٹکا لیا کریں تاکہ کوئی فاسق ان کو چھیڑنے کی جرأت نہ کرے۔‘‘ (جامع البیان جلد ۲۲۔ ص ۳۳)
علّامہ ابو بکر جصّاص کہتے ہیں :’’یہ آیت اس بات پر دلالت کرتی ہے کہ جو ان عورت کو اجنبیوں سے اپنا چہرہ چھپانے کا حکم ہے اور اسے گھر سے نکلتے وقت ستر اور عفّت مآبی کا اظہار کرنا چاہئے تاکہ مشتبہ سیرت و کردار کے لوگ اُسے دیکھ کر کسی طمع میں مبتلا نہ ہوں۔‘‘ (احکام القرآن ، جلد ۳، صفحہ ۴۵۸)
علامہ زَمَخْشَری کہتے ہیں :’’یُدْنِیْنَ عَلَیْھِنَّ مِنْ جَلَا بِیْبِھِنَّ، یعنی وہ اپنے اوپر اپنی چادروں کا ایک حصّہ لٹکا لیا کریں اور اس سے اپنے چہرے اور اپنے اطراف کو اچھی طرح ڈھانک لیں۔‘‘ ( الکشا۔ جلد ۲،ص ۲۲۱)
علّامہ نظام الدین نیشا پوری کہتے ہیں :ید نین لیھن من جلا بیبھنّ ،یعنی اپنے اوپر چادر کا ایک حصہ لٹکا لیں۔ اس طرف عورتوں کو سر اور چہرہ ڈھانکنے کا حکم دیا گیا ہے۔‘‘ (غرائب القرآن جلد ۲۲، ص۳۲)
امام رازی کہتے ہیں :’’ اس سے مقصود یہ ہے کہ لوگوں کو معلوم ہو جائے کہ یہ بدکار عورتیں نہیں ہیں۔کیونکہ جو عورت اپنا چہرہ چھپائے گی، حالانکہ چہرہ ستر میں داخل نہیں ہے ، اس سے کوئی شخص یہ توقع نہیں کر سکتا کہ وہ اپنا ستر غیر کے سامنے کھولنے پر راضی ہو گی۔ اس طرح ہر شخص جان لے گا کہ یہ با پردہ عورتیں ہیں ، اس سے زنا کی امید نہیں کی جا سکتی۔‘‘(تفسیر کبیر ، جلد ۶، ص ۵۹۱)
تفہیم القرآن
 
Last edited:

QasimAttari

Citizen
Surah Mudassir is the 74th chapter of the Holy Quran and the word Mudassir means ‘the Cloaked One’ or ‘the Man Wearing a Cloak’ in Arabic. The chapter is a very important one among the total of 114 and presents the situation after Prophet Muhammad ﷺ got his first revelations. Reading this surah has several benefits and you can now even listen to this powerful Surah on our Quran service!
 

Mughal1

Chief Minister (5k+ posts)
Surah Mudassir is the 74th chapter of the Holy Quran and the word Mudassir means ‘the Cloaked One’ or ‘the Man Wearing a Cloak’ in Arabic. The chapter is a very important one among the total of 114 and presents the situation after Prophet Muhammad ﷺ got his first revelations. Reading this surah has several benefits and you can now even listen to this powerful Surah on our Quran service!

azeezam qasim attari sb, kia liyaaf le ker sone waale log khudaa ke paighambar ho sakte hen jin ko tehreek barpa kerni hoti hai?

quraan ke yeh betuke tarjame hi is ummat ki barbaadi ka asal sabab hen. ye tarjame padh ker kisi ko ye maloom nahin ho sakta keh quraan koi inqalaab barpa kerne waali kitaab hai.

aik baat aap achhi tarah se jaan len keh kissi bhi shai ka saheeh ilm aap kuchh bunyaadi baatun ke baghair haasil hi nahin ker sakte.

sab se pehle roshni darkaar hai jis ki madad se kisi shai ko dekha jaa sake. us ke saath saath aankhen darkaar hen jo dekh saken. in ke saath saath cheezen darkaars hen jin ko aap dekh saken, in main se agar aik bhi shai missing ho to sab bekaar hai.

in lawaazmaat ke baad aap ko cheezun ko samajh sakne ke liye aqal ki bhi zaroorat hai. is ke bawjood aap cheezen ka saheeh ilm haasil hi nahin ker sakte jab tak aap ko in ka saheeh context yani asal sayaaqo sabaaq maloom na ho. her baat apne saheeh context main hi drust samajh aa sakti hai warna nahin.

ab sawaal peda hota hai context kahaan se aata hai? her shai ka drust context us ka maqsad teh kerta hai. issi liye sawaal peda hota hai keh maqsad kahaan se aata hai?

drust maqsad cheezun ko banaane ya plan kerne waale hi ki taraf se aa sakta hai aur kaheen se nahin. issi liye jab tak cheezun ka asal maqsad maloom na ho un ko istemaal kerne waale un ka drust istemaal ker hi nahin sakte.

ab aap bataaye nazoole quraan ka asal maqsad kia hai? kia khudaa ham se apni ya apni kitaabun ki ya apne paighamberun ki ya apne achhe bandun ki pooja paat kerwaana chahta hai?

agar nahin to phir aap aisi baaten kyun kerte ho aur logoon ko bataate ho jo quraan ke maqsade nazool hi ke sakht khilaaf hen? issi liye to duniya main bahot se log quraan ki izzat nahin kerte keh aap ke mullaan ne quraan ke tarjame hi ghalat kiye huwe hen. jo quraan ke maqsade nazool se takraate hen.

aap ke mullaan ne sab ko yahee bataaya hai keh khudaa ne insaanu ko aazmaane ke liye peda kiya hai jo bilkul aik ghalat baat hai. quraan ke nazool ka ye matlab her giz nahin hai. khudaa ko insaanu ko aazmane ki qatan zaroorat nahin hai aur na hi ho skati hai.

lihaaza main chahta hun aap bataayen nazoole quraan ka asal maqsad taa keh baat aage chal sake. waise maine apni baaz posts main ye bataaya huwa hai keh nazoole quraan ka asal maqsad kia hai. For better understanding of deen of islam from the quran see HERE, HERE, HERE and HERE.

main ne ye bhi bataaya huwa hai keh quraan ki madad se mulk ka dastooro qanoon kaise banaaya jaa sakta hai jo aaj tak koi mullaan na bataa saka. issi liye aaj tak hamaare paas quraan per mabni dastooro qanoon nahin hen.

aise log madina jaisi riyaasat kaise banaa sakte hen jin ko quraani dastooro qanoon banaane ka ilm hi nahin hai?

regards and all the best
 
Last edited:
Sponsored Link