وفاقی حکومت نے قبائلی اضلاع میں صحت کارڈ کی سہولت ختم کردی

20fatasehatcard.jpg

وفاقی حکومت نے ایکس فاٹا کے علاقے میں صحت کارڈ کی سہولت ختم کردی ہے۔

مائیکروبلاگنگ ویب سائٹ ٹویٹر پر پاکستان تحریک انصاف کے آفیشل ٹویٹر ہینڈل سے اسٹیٹ لائف انشورنس کا ایک اعلامیہ شیئر کیا گیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ وفاقی صحت کارڈ سہولت پروگرام کے تحت قبائلی اضلاع(ایکس فاٹا) میں صحت کارڈ پروگرام کو جاری نہیں رکھا جاسکتا ۔


پنجاب کی سابق وزیر صحت یاسمین راشد نے وفاقی حکومت کے اس اقدام پر تحفظات کا اظہار کیا اور اس پر تنقید کی۔

انہوں نے کہا کہ عوام کی حکومت، جو عوام کیلئےہیں اور عوام کی طرف سے ہوتی ہیں وہ صرف عوام کے فائدہ کیلئے کام کرتی ہیں۔


یاسمین راشد نے کہا تاہم جو حکومتیں غیر قانونی طریقے سے رجیم چینج کے ذریعے جنم لیتی ہیں ان کا مقصد صرف اپنے مفاد کا تحفظ ہوتا ہے۔

واضح رہے کہ صحت کارڈ سہولت پروگرام سابقہ دور حکومت میں وزیراعظم عمران خان نے متعارف کروایا تھا جس کے تحت پنجاب، خیبر پختونخوا کے ہر شہری کو میڈیکل انشورنس حاصل تھی اور وہ نجی و سرکاری اسپتالوں میں اپنا مفت علاج کرواسکتا تھا۔
 
Advertisement
Last edited by a moderator:

Arshak

Minister (2k+ posts)
Imported beggars have ruined the economy,doubled petrol and diesel prices,devalued the rupees and stopped every relief given to the poorer section of the population.These crooks promised to reduced inflation,reduce petrol and electricity prices but have not fulfilled a single promise.
 

disgusted

Chief Minister (5k+ posts)
Imported beggars have ruined the economy,doubled petrol and diesel prices,devalued the rupees and stopped every relief given to the poorer section of the population.These crooks promised to reduced inflation,reduce petrol and electricity prices but have not fulfilled a single promise.
Their aim was to save their looted wealth. They have been successful. Awam can go and fuck themselves.
 
Sponsored Link