پاکستان میں آم کی پیداوار میں اس سال نمایاں کمی ، وجوہات کیا ؟

mango-pakistan-pr.jpg


موسمیاتی تبدیلی سے آم کے شوقین افراد کیلیے خطرے کی گھنٹی

آم پھلوں کا بادشادہ جسے کھانے کیلیے ہر کوئی ہی بے تاب، لیکن موسمیاتی تبدیلی نے پھلوں کے اس بادشاہ کو نقصان پہنچانے کی ٹھان لی،آل پاکستان فروٹ اینڈ ویجیٹبل ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن کے مطابق رواں سیزن موسمیاتی اثرات اور بلند درجہ حرارت کی وجہ سے آم کی پیداوار کو نقصان پہنچا ہے۔

پاکستان میں آم کی اوسط پیداوار 18لاکھ میٹرک ٹن ہے جو رواں سیزن 50فیصد کم ہو کر9 لاکھ میٹرک ٹن تک محدود رہنے کا خدشہ ہے، ایسوسی ایشن کے چیئرمین وحید احمد کے مطابق رواں سیزن مارچ کے وسط میں آم کے پیداواری علاقوں میں اوسط درجہ حرارت 37 سے 42 ڈگری سینٹی گریڈ رہا جو گزشتہ سیزن اوسط 34ڈگری سینٹی گریڈ ریکارڈ کیا گیا تھا۔

درجہ حرارت بڑھنے سے آم کی پیداوار کو بھاری نقصان پہنچا ہے، آب پاشی کے مسائل،نہروں کی بندش کی وجہ سے پانی کی قلت،بجلی کی لوڈشیڈنگ اورسیزن کے دوران ڈیزل کی قلت نے آم کی فصل کو شدید نقصان پہنچایا ہے۔

وحید احمد کا کہنا ہے کہ رواں سیزن آم کی پیداوار اور ایکسپورٹ کو تاریخ کے سب سے مشکل سیزن کا سامنا ہورہاہے،روپے کی قدر میں کمی اور بجلی گیس کے ساتھ لیبر کی لاگت بڑھنے سے آم کی پراسیسنگ کی لاگت میں نمایاں اضافہ ہوا ہے۔

پیکجنگ میٹریل گزشتہ سیزن سے 30فیصد تک مہنگاہواہے،جس سے آم کے ایکسپورٹرز کے لیے انٹرنیشنل مارکیٹ میں مسابقت مشکل ہوگئی،وحید احمد کا کہنا تھا کہ سمندری کرایوں میں نمایاں اضافے نے پاکستان کے آم کے لیے مسابقت کو دشواربنانے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔

چیئرمین ایسوسی ایشن کا کہنا ہے کہ گزشتہ سال خلیجی ممالک کے لیے سمندری کرائے 1900ڈالر فی کنٹینر تھے جو اس سال 2800ڈالر سے 3000 ڈالر فی کنٹینر تک ہوچکے ہیں، اس کے ساتھ ہی فضائی کرایوں میں بھی اضافے کے خدشےسے آم کی ترسیل کی لاگت غیرمعمولی طور پر بڑھ چکی ہے۔

انہوں نے بتایا کہ موسمیاتی اثرات ، تیز ہواﺅں اور آندھی کے ساتھ بارش کی صورت میں آم کی فصل کے نقصانات آنے والے مہینوں میں مزید بڑھیں گے۔

چیئرمین وحیدنے حکومت سے ایکسپورٹ کی لاگت کو کم کرنے اور پاکستانی آم کے لیے انٹرنیشنل مارکیٹ میں مسابقت کو آسان بنانے کے لیے سمندری اور فضائی کرایوں میں 20فیصد سبسڈی کی فراہمی،پی آئی اے کے فریٹ چارجز میں رعایت دینے کا مطالبہ کردیا۔

وحید احمد کا کہنا ہے کہ آم کی ایکسپورٹ کے اس مشکل ترین سیزن کے ہدف کو پورا کرنے کے لیے آم کی ایکسپورٹ سے متعلقہ سرکاری ادارے اور اتھارٹیز بشمول پورٹ اور ایئرپورٹ اتھارٹیز،کسٹم حکام، پلانٹ پروٹیکشن ڈپارٹمنٹ اور دیگر اداروں کے تعاون کی ضرورت ہے۔
 

Arshak

Minister (2k+ posts)
It is not only mangoes the yields other crops will be lower.Wheat crop has been badly affected by soaring temperatures.India has banned export of wheat due to fear of shortages.
 

Bubber Shair

Chief Minister (5k+ posts)
کلائمنٹٹ تو اک بہانہ ہے
جو لاکھوں آم کے درخت کاٹے تھے کچھ عرصہ پہلے یہ اسی کا شاخسانہ ہے
ملتان اور اسکے گردو نواح میں دنیا بھر کے بہترین آم کی پیداوار ہے مگر وہیں پر آم کے بڑے بڑے باغات کاٹ کر کالونیز بنای گئی ہیں ساٹھ ہزار آم کے درخت تو صرف ایک دو باغات میں کاٹے گئے تھے
 

taban

Chief Minister (5k+ posts)
ملتان اور اسکے گردو نواح میں دنیا بھر کے بہترین آم کی پیداوار ہے مگر وہیں پر آم کے بڑے بڑے باغات کاٹ کر کالونیز بنای گئی ہیں ساٹھ ہزار آم کے درخت تو صرف ایک دو باغات میں کاٹے گئے تھے
اس کا تو میں رونا رو رہا ہوں
 

kayawish

Chief Minister (5k+ posts)
ملتان اور اسکے گردو نواح میں دنیا بھر کے بہترین آم کی پیداوار ہے مگر وہیں پر آم کے بڑے بڑے باغات کاٹ کر کالونیز بنای گئی ہیں ساٹھ ہزار آم کے درخت تو صرف ایک دو باغات میں کاٹے گئے تھے
60k trees ek baagh main ? damn thats insane.
 
Sponsored Link