چند ماہ پہلے تک آئی ایم ایف کوکوسنے والے آج اسی در پرسرنگوں ہیں،کامران خان

8%DA%A9%DA%A9%DB%8C%D9%85%D9%81%D9%BE%DA%A9%DA%AF%D8%B3%D8%B9%DA%BE%D8%A8%D8%A7%D8%B2.jpg

سینئر تجزیہ کار کامران خان نے کہا ہے کہ چند ماہ پہلے تک جو سیاستدان آئی ایم ایف پروگرام کو کوستے ہوئے نظر آرہے تھے وہ آج اسی آئی ایم ایف کے در پر سرنگوں ہیں۔

مائیکروبلاگنگ ویب سائٹ ٹویٹر پر کامران خان نے ایک ویڈیو شیئر کی جس میں موجودہ وزیراعظم شہباز شریف جو ماضی میں اپوزیشن لیڈر تھے قومی اسمبلی میں تقریر کرتے ہوئے آئی ایم ایف پروگرام میں جانے پر تحریک انصاف کی حکومت پر تنقید کرتے سنائی دے رہے تھے۔

شہباز شریف کا کہنا تھا کہ ایک ارب ڈالر کیلئے یہ حکومت آئی ایم ایف کے منتیں ترلے کررہے ہیں، اور ایسی شرائط مان رہے ہیں جس سے پاکستان کی خودمختاری اور آزادی پر بہت بڑا دھچکہ لگے گا، موجودہ حکمران سیکیورٹی رسک بن چکے ہیں۔


ماضی میں بلاول بھٹو زرداری بھی آئی ایم ایف پروگرام پر تنقید کرتے ہوئے کہتے تھے کہ آئی ایم ایف پروگرام کو نہیں مانتے اور مطالبہ کرتے ہیں کہ اس ڈیل سے نکلا جائے اور عوام دشمن آئی ایم ایف پروگرام کو منسوخ کیا جائے۔


سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی بھی ماضی میں کہتے سنے جاسکتے ہیں کہ آئی ایم ایف پروگرام مستقبل میں بلڈوز ہوگا، رانا ثنااللہ کہتے تھے کہ حکومت نے کچھ بھی نہیں چھوڑا، اسٹیٹ بینک سے لے کر اس ملک کی پوری اکانومی آئی ایم ایف کے حوالے کردی ہے۔

کامران خان نے موجودہ اتحادی جماعتوں کی حکومت کے رہنماؤں کو یہ آئینہ دکھاتے ہوئے کہا کہ یہ عمران خان کی دشمنی تھی یا آئی ایم ایف دشمنی؟ ان سیاستدانوں کو اللہ ہی سمجھے گا، ان کی چند ماہ پہلے کی گفتگو سنیئے جس میں یہ لوگ آئی ایم ایف کو کوستے اور اس کے ذریعےپاکستان پر آئی ایم ایف کی غلامی کی کہانیاں سناتے تھے۔

کامران خان نے کہا کہ آج اسی آئی ایم ایف کے در پر ان حضرات کی اپنی حکومت سرنگوں ہے اور آئی ایم ایف کے اشارے پر ملک میں مہنگائی بم پھٹنے کو ہے۔
 
Advertisement

Khallas

Chief Minister (5k+ posts)
Pakistan ka Allah hi Hafiz hai, yeh mulk ab wahan ja raha hay jahan iski wapsi nahin.

In sab nay mulk ko lout kar bahir bhag jana hai, chahye judge ho, general ho, siasat-dan hon bhugtay gi Pakistani awam hi.
 

miafridi

Prime Minister (20k+ posts)
8%DA%A9%DA%A9%DB%8C%D9%85%D9%81%D9%BE%DA%A9%DA%AF%D8%B3%D8%B9%DA%BE%D8%A8%D8%A7%D8%B2.jpg

سینئر تجزیہ کار کامران خان نے کہا ہے کہ چند ماہ پہلے تک جو سیاستدان آئی ایم ایف پروگرام کو کوستے ہوئے نظر آرہے تھے وہ آج اسی آئی ایم ایف کے در پر سرنگوں ہیں۔

مائیکروبلاگنگ ویب سائٹ ٹویٹر پر کامران خان نے ایک ویڈیو شیئر کی جس میں موجودہ وزیراعظم شہباز شریف جو ماضی میں اپوزیشن لیڈر تھے قومی اسمبلی میں تقریر کرتے ہوئے آئی ایم ایف پروگرام میں جانے پر تحریک انصاف کی حکومت پر تنقید کرتے سنائی دے رہے تھے۔

شہباز شریف کا کہنا تھا کہ ایک ارب ڈالر کیلئے یہ حکومت آئی ایم ایف کے منتیں ترلے کررہے ہیں، اور ایسی شرائط مان رہے ہیں جس سے پاکستان کی خودمختاری اور آزادی پر بہت بڑا دھچکہ لگے گا، موجودہ حکمران سیکیورٹی رسک بن چکے ہیں۔


ماضی میں بلاول بھٹو زرداری بھی آئی ایم ایف پروگرام پر تنقید کرتے ہوئے کہتے تھے کہ آئی ایم ایف پروگرام کو نہیں مانتے اور مطالبہ کرتے ہیں کہ اس ڈیل سے نکلا جائے اور عوام دشمن آئی ایم ایف پروگرام کو منسوخ کیا جائے۔


سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی بھی ماضی میں کہتے سنے جاسکتے ہیں کہ آئی ایم ایف پروگرام مستقبل میں بلڈوز ہوگا، رانا ثنااللہ کہتے تھے کہ حکومت نے کچھ بھی نہیں چھوڑا، اسٹیٹ بینک سے لے کر اس ملک کی پوری اکانومی آئی ایم ایف کے حوالے کردی ہے۔

کامران خان نے موجودہ اتحادی جماعتوں کی حکومت کے رہنماؤں کو یہ آئینہ دکھاتے ہوئے کہا کہ یہ عمران خان کی دشمنی تھی یا آئی ایم ایف دشمنی؟ ان سیاستدانوں کو اللہ ہی سمجھے گا، ان کی چند ماہ پہلے کی گفتگو سنیئے جس میں یہ لوگ آئی ایم ایف کو کوستے اور اس کے ذریعےپاکستان پر آئی ایم ایف کی غلامی کی کہانیاں سناتے تھے۔

کامران خان نے کہا کہ آج اسی آئی ایم ایف کے در پر ان حضرات کی اپنی حکومت سرنگوں ہے اور آئی ایم ایف کے اشارے پر ملک میں مہنگائی بم پھٹنے کو ہے۔

Noon Leak is not only habitual liars but they are also incompetent.

IK was going to get flour and fuel at 30% discount, the economic benefit of which was in billions of dollars and it was pure earning/saving not aid or loan, plus you didn't have to live like slaves. But unfortunately the corrupt elite sell themselves at a very cheap price.

امپورٹڈ_حکومت_نامنظور
 
Sponsored Link