ڈولتی معیشت کے استحکام کیلئے سپر ٹیکس لگایا، وزیراعظم کی وضاحت

7shehbazwazahatsupertaxtwitetr.jpg

وزیر اعظم شہباز شریف نے امیروں پر 10 فیصد سپر ٹیکس لگانے کی وضاحت دے دی،ٹوئٹر پر لکھا کہ اتحادی حکومت کے اقتدار میں آنے پر 2 راستے تھے، پہلا راستہ یہ تھا کہ الیکشن کرائیں اور معیشت کو ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہونے کے لیے چھوڑ دیں اور دوسرا راستہ یہ تھا کہ پہلے اقتصادی چیلنجوں سے نمٹا جائے۔

وزیر اعظم شہباز شریف نے مزید کہا کہ ہم نے پاکستان کو معاشی دلدل سے بچانے کا انتخاب کیا، ہم نے پاکستان کو پہلے سامنے رکھا، یہ پہلا بجٹ ہے جس میں معیشت کی بحالی کا منصوبہ ہے۔


وزیراعظم نے مزید لکھا کہ سخت فیصلے ملک کو معاشی بحران پر قابو پانے کے قابل بنائیں گے، حکومت نے کم آمدنی والے اور تنخواہ دار پر کم سے کم بوجھ ڈالنے کی کوشش کی،حکومت نے یہ فیصلہ غربت کے خاتمے کے مقصد سے کیا ہے، متمول طبقے سے کہا ہے وہ بوجھ بانٹ کر قومی فرض پورا کریں۔

وزیراعظم شہباز شریف نے ٹویٹ میں لکھا کہ براہ راست ٹیکس سے حاصل رقم مالی مشکلات سے متاثر افراد پر خرچ ہوگی، میکرو اکنامک استحکام پہلا قدم ہے،اتحادی حکومت معاشی خود کفالت حاصل کرنا چاہتی ہے، ہماری قومی سلامتی کا معاشی انحصار سے بہت گہرا تعلق ہے۔


گزشتہ روز وزیر اعظم شہباز شریف نے معاشی ٹیم کے اجلاس کی صدارت کے بعد گفتگو کرتے ہوئے کہا تھا کہ بڑی صنعتوں پر 10 فیصد سپر ٹیکس لگایا جائے گا، سالانہ 15 کروڑ روپے سے زائد کمانے والے کی آمدن پر 1 فیصد ٹیکس لگایا جائے گا، 20 کروڑ روپے سالانہ سے زائد آمدن پر 2 فیصد، 25 کروڑ روپے سالانہ سے زائد آمدن پر 3 فیصد اور 30 کروڑ روپے سالانہ سے زائد آمدن پر 4 فیصد ٹیکس لگایا جائے گا۔

 
Advertisement
Sponsored Link