وزیرِ اعظم ہاؤس کی چند گھنٹوں میں 2 مبینہ آڈیو لیکس،سائبرسوالات اٹھنے لگے

2PMHousectberscurity.jpg

وزیرِ اعظم ہاؤس سے وزیرِ اعظم شہباز شریف، وفاقی وزراء اور ن لیگی رہنماؤں کے اجلاس کی مبینہ آڈیو لیکس سے سلامتی کا معاملہ اٹھ گیا، وزیراعظم ہاؤس کی سلامتی کے حوالے سے سوالات اٹھ رہے ہیں۔

مبینہ آڈیو لیک کے بعد کیا وزیرِ اعظم ہاؤس اتنا غیرمحفوظ ہے کہ وہاں ہونے والی گفتگو کہیں اور سنی جا سکتی ہے؟آڈیو لیک سامنے آنے کے بعد کیا وزیرِ اعظم ہاؤس میں قومی سلامتی کے معاملے پر کوئی اجلاس ہو سکتا ہے؟کیا حکومت اور وزیرِ اعظم پالیسی سازی کے لیے ان کیمرا اجلاس کر کے مطمئن ہو سکتے ہیں؟کیا وزیرِ اعظم ہاؤس میں ایسے خفیہ ریکارڈنگ سسٹم ہیں جنہیں حکومتی ارکان بھی نہیں جانتے؟


مبینہ آڈیو میں وزیرِ اعظم شہباز شریف، رانا ثنا ، ایاز صادق، خواجہ آصف اور دیگر رہنما پی ٹی آئی کے استعفوں کی منظوری پر مشاورت کر رہے ہیں،مبینہ آڈیو لیک میں پی ٹی آئی ارکان کے استعفوں کی منظوری پر وفاقی وزرا کی مختلف رائے کا اظہار کررہے ہیں۔

آڈیو میں استعفوں کی منظوری کے لیے لندن سے اجازت لینے کا بھی ذکر ہے،گزشتہ روز بھی وزیرِ اعظم شہباز شریف کی مبینہ آڈیو ٹیپ سامنے آئی تھی جس میں ایک شخص شہباز شریف کو بتا رہا ہے کہ مریم نواز اپنے داماد کے لیے بھارت سے پاور پلانٹ درآمد کرنے کا کہہ رہی ہیں، آدھا پلانٹ بھارت سے آچکا تھا، آدھا باقی ہے،اس پر دوسرا شخص شہباز شریف کو مشورہ دیتا ہے کہ یہ کام اسحاق ڈار سے کر والیں وہ سمجھا دیں گے۔

ایک اور مبینہ آڈیو لیک میں مریم نواز شہباز شریف کو پیٹرول کی قیمت بڑھانے کے مشورے دے رہی ہیں، ساتھ ہی مفتاح اسماعیل پر تنقید کرتے ہوئے اسحاق ڈار کی واپسی کی خواہش کا اظہار کررہی ہیں۔
 
Sponsored Link