کوہلی کی اسٹمپ مائیک پربراڈ کاسٹرز پرتنقید’’11کھلاڑیوں کےخلاف پورا ملک ہے‘‘

drs-kohli.jpg


بھارت اور جنوبی افریقا کے درمیان کیپ ٹاؤن میں جاری تیسرے ٹیسٹ میں اس وقت دلچسپ صورتحال پیدا ہوگئی جب ڈین ایلگر ڈی آر ایس پر ایل بی ڈبلیو قرار پانے سے بچ گئے۔

بھارتی ٹیم کی مرضی کے خلاف آنے والے اس فیصلے پر بھارتی کو مروڑ اٹھنے لگے اور اس کے مختلف پلیئرز اسٹمپ مائیک پر جا کر براڈ کاسٹرز پر تنقید کرتے رہے۔

تفصیلات کے مطابق بھارت اور جنوبی افریقا کے درمیان کیپ ٹاؤن میں جاری تیسرے ٹیسٹ میں ڈین ایلگر ڈی آر ایس پر ایل بی ڈبلیو قرار پانے سے بچ گئے مگر بھارتی ٹیم اس فیصلے کے خلاف اسٹمپ مائیک پر براڈ کاسٹرز پر تنقید کرتے رہے۔


بھارتی کرکٹ ٹیم کے کے ایل راہول، روی چندرن ایشون اور ویرات کوہلی اسٹمپ مائیک پر آکر اپنی بھڑاس نکالتے اور براڈ کاسٹرز پر تنقید کی۔


کوہلی نے اسٹمپس مائیک کے پاس آکر کہا کہ اپنی ٹیم پر بھی ذرا دھیان دو صرف مخالف ٹیم کو ہی دبانے میں نہ لگے رہو، کے ایل راہول نے کہا کہ 11 کھلاڑیوں کے خلاف پورا ملک کھڑا ہے ایشون نے کہا کہ اس گیم کو جیتنے کیلئے آپ کو کوئی اور طریقہ تلاش کرنا چاہیے۔



اس پورے واقعے پر سوشل میڈیا پر بھی بحث چھڑ گئی کرکٹ شائقین نے کہا کہ بھارتی ٹیم کو آج جس ڈی آر ایس کا دکھ ہے ، وہ 2011 ورلڈ کپ میں اسی ڈی آر ایس سے مستفید ہوئے تھے جب سعید اجمل کی گیند پر ٹنڈولکر کا ایل بی ڈبلیو اوور ٹرن ہوگیا تھا۔


انوشہ نے کہا کہ جس ڈی آر ایس کو آج گالیاں دے رہے ہیں کبھی اسی نے ان کی عزت بچائی تھی۔


آتھما نے کہا کہ بھارتی ٹیم کی بری بات یہ ہے کہ جب وہ ہارتے ہیں یا فیصلہ ان کی مرضی کے خلاف ہوتا ہے تو رونے لگتے ہیں۔

 
Advertisement

gorgias

Chief Minister (5k+ posts)
انڈین ٹیم کا رویہ بالکل نواز شریف کی طرح کا ہے۔ ہمارے سر پر ہاتھ رکھے تو اچھے ہیں لیکن کسی اور کے سر پر ہاتھ ہو تو بُرے۔۔۔۔
 

wasiqjaved

Minister (2k+ posts)
drs-kohli.jpg


بھارت اور جنوبی افریقا کے درمیان کیپ ٹاؤن میں جاری تیسرے ٹیسٹ میں اس وقت دلچسپ صورتحال پیدا ہوگئی جب ڈین ایلگر ڈی آر ایس پر ایل بی ڈبلیو قرار پانے سے بچ گئے۔

بھارتی ٹیم کی مرضی کے خلاف آنے والے اس فیصلے پر بھارتی کو مروڑ اٹھنے لگے اور اس کے مختلف پلیئرز اسٹمپ مائیک پر جا کر براڈ کاسٹرز پر تنقید کرتے رہے۔

تفصیلات کے مطابق بھارت اور جنوبی افریقا کے درمیان کیپ ٹاؤن میں جاری تیسرے ٹیسٹ میں ڈین ایلگر ڈی آر ایس پر ایل بی ڈبلیو قرار پانے سے بچ گئے مگر بھارتی ٹیم اس فیصلے کے خلاف اسٹمپ مائیک پر براڈ کاسٹرز پر تنقید کرتے رہے۔


بھارتی کرکٹ ٹیم کے کے ایل راہول، روی چندرن ایشون اور ویرات کوہلی اسٹمپ مائیک پر آکر اپنی بھڑاس نکالتے اور براڈ کاسٹرز پر تنقید کی۔


کوہلی نے اسٹمپس مائیک کے پاس آکر کہا کہ اپنی ٹیم پر بھی ذرا دھیان دو صرف مخالف ٹیم کو ہی دبانے میں نہ لگے رہو، کے ایل راہول نے کہا کہ 11 کھلاڑیوں کے خلاف پورا ملک کھڑا ہے ایشون نے کہا کہ اس گیم کو جیتنے کیلئے آپ کو کوئی اور طریقہ تلاش کرنا چاہیے۔



اس پورے واقعے پر سوشل میڈیا پر بھی بحث چھڑ گئی کرکٹ شائقین نے کہا کہ بھارتی ٹیم کو آج جس ڈی آر ایس کا دکھ ہے ، وہ 2011 ورلڈ کپ میں اسی ڈی آر ایس سے مستفید ہوئے تھے جب سعید اجمل کی گیند پر ٹنڈولکر کا ایل بی ڈبلیو اوور ٹرن ہوگیا تھا۔


انوشہ نے کہا کہ جس ڈی آر ایس کو آج گالیاں دے رہے ہیں کبھی اسی نے ان کی عزت بچائی تھی۔


آتھما نے کہا کہ بھارتی ٹیم کی بری بات یہ ہے کہ جب وہ ہارتے ہیں یا فیصلہ ان کی مرضی کے خلاف ہوتا ہے تو رونے لگتے ہیں۔

A New Low for Team India. Why can't one accept that another team is talented than you and can win?

Never have I ever seen any captain of Indian Team crying like this. Sending message to TV umpires by talking to Stump microphones is just pure stupidity.
 

Bubber Shair

Chief Minister (5k+ posts)
اس کو کہتے ہیں کھسیانی بلی کھمبا نوچے
یوں ری ایکشن دے رہے ہیں جیسے اشون کی اسی وکٹ نے انہیں دو ٹیسٹ اوپر تلے ہرواے ہوں؟
کیا ساوتھ افریقنز نے انکے تمام ہوم گراونڈز کے شیر زمین بوس نہیں کئے؟ سب کے سب کیچ آوٹ ہوے ہیں سواے ایک آدھ کے؟
یہ وکٹ بہت باونسی ہے ۔ اسی میچ میں بال ہائیٹ کا ایدوانٹیج انڈیا نے بھی لیا جب ایمپائر نے انڈیا کے ون ڈاون بلے باز پجارا کو ایل بھی ڈبلیو قرار دے دیا بال انکی مڈل سٹیمپ کو ہٹ کررہی تھی مگر سسٹم نے بال ہائیٹ ہی کی وجہ سے اسے ناٹ آوٹ دیا جس کے بعد اس نے انڈیا کی اننگ میں دوسرا بڑا ااسکور کیا
تب ساوتھ افریقن کپتان نے تو ہوا میں لات نہیں چلای تھی اور نہ ہی اشون کی طرح گھٹیا کمنٹ دئیے تھے انڈینز ہیں ہی چول سسٹم بالکل ٹھیک اور بہت مفید ہے کیونکہ بہت سارے متنازع فیصلے جیسے نوبال، فل ٹاس بال کی ہائیٹ، سٹمپ اور رن آوٹ ایل بی ڈبلیو خاص کو وہ بال جو لیگ پر ٹپا کھا کر اندر آے سسٹم ہی کی برکت سے یہ درست فیصلے ہورہے ہیں
انڈینز کو چاہئے کہ شکست تسلیم کرنے کی عادت ڈالیں اور سسٹم میں خامیاں تلاش کرنے کی بجاے اپنے آپ کو کھنگالیں
 
Last edited:
Sponsored Link