کابینہ نے پٹرول پر 10 فیصد ریگولیٹری ڈیوٹی لگانے کی منظوری دے دی

shehbaz-ss-petrol-sss.jpg


کابینہ نے چین سے پیٹرول کی درآمد پر 10 فیصد ریگولیٹری ڈیوٹی لگانے کی منظوری دے دی جب کہ درآمد کے لیے پہلے سے بک ہونے والی شپمنٹس کو استثنیٰ دے دیا ہے۔

س سے پہلے چین پاکستان فری ٹریڈ ایگریمنٹ (ایف ٹی اے) کے تحت تیل کی درآمد پر صفر ڈیوٹی ہے۔جس سے تیل کی کمپنیوں نے چین سے پیٹرول پر ٹیکس چھوٹ کی مد میں 22 ارب روپے سے زائد کا فائدہ اٹھایا۔

فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) اور وزارت تجارت نے معاملہ اٹھایا اور بات چیت کی کہ چین سے پیٹرول کی درآمد میں اضافہ ہوا جس سے حکومتی حلقوں میں تشویش کی لہر دوڑ گئی۔

سیکرٹری پٹرولیم نے کابینہ کے حالیہ اجلاس میں اس معاملے کو اٹھایا، اس بات کی نشاندہی کرتے ہوئے کہ اقتصادی رابطہ کمیٹی (ای سی سی) نے چین سے پٹرول کی درآمد پر 10 فیصد ریگولیٹری ڈیوٹی عائد کی ہے۔

تاہم، انہوں نے وزیر اعظم شہباز شریف کی زیر صدارت کابینہ سے درخواست کی کہ لیوی کا اطلاق ان کارگوز پر نہ کیا جائے جن کے لیے پہلے ہی لیٹرز آف کریڈٹ (ایل سی) کھولے جا چکے ہیں۔

کابینہ نے اس تجویز کی منظوری دی کہ ریگولیٹری ڈیوٹی کا اطلاق ان معاہدوں پر نہیں ہوگا جن کے لیے ایل سی پہلے ہی کھولے جاچکے ہیں اور ان تیل کارگوز پر جو پاکستان کے راستے پر تھے۔

ای سی سی نے وزارت تجارت کی طرف سے پیش کی گئی سمری کا جائزہ لیا جس کے بعد مالی سال 2021-22 کے دوران وزارت توانائی (پیٹرولیم ڈویژن) کی سفارش پر موٹر اسپرٹ پر کسٹم ڈیوٹی 5 فیصد سے بڑھا کر 10 فیصد کر دی گئی۔

تاہم، چین پاکستان ایف ٹی اے کے تحت کسٹم ڈیوٹی سے چھوٹ کی وجہ سے موجودہ مالی سال میں کچھ آئل مارکیٹنگ کمپنیوں نے چین سے پیٹرول کی درآمد میں اضافہ کیا۔

اس طرح کی درآمدات گزشتہ مالی سال میں 30 ارب روپے سے بڑھ کر رواں سال میں 232 ارب روپے تک پہنچ گئیں، جو کہ 673 فیصد اضافے کو ظاہر کرتی ہیں۔

ایف ٹی اے سے مستثنیٰ ہونے والی آئل کمپنیز کوئی کسٹم ڈیوٹی ادا نہیں کرتیں جبکہ دیگر 10 فیصد ڈیوٹی ادا کرتے ہیں۔ رواں مالی سال میں اس استثنیٰ کے محصولات کے اثرات کا تخمینہ تقریباً 22.5 بلین روپے لگایا گیا ہے۔
 
Advertisement
Sponsored Link