Turkey arrested over 362 Senior Judges for Corruption. The London Post

Nain

Councller (250+ posts)
The recent Pakistani Supreme Court judgment in favor of Justice Feaz Easa by brother judges ignoring the commonsense rule of ‘beyond reasonable doubt’ has saddened the legal community worldwide as well as Pakistani nation. The judge and his Spanish wife failed to provide the evidence of his sources of income used in the purchasing of three properties in London. They transferred the funds to UK for the education of their children but later purchased properties as reported in their own documents. It is called misleading and misrepresentation in British law?


Justice Eassa and some of his fellow judges are too quick to criticize Armed Forces of Pakistan and agencies ranked among top 10 best in the world. However, it is a moment of shame for justice Faez Eassa and his fellow judges that Pakistani Judiciary ranked a 120th place out of 128 countries and jurisdictions worldwide according to Washington based, The World Justice Project (WJP) 2020, annual report published on 11 March 2020. The Judges and their families are above and beyond the laws of Pakistan now.

Turkey


However, in Turkey on 21 January 2021, Turkish authorities have issued arrest warrants for 44 judges and prosecutors suspected of links to the group Ankara blames for a 2016 coup attempt, corruption and cheating in examination papers.

Earlier over 100 members of Turkey’s Constitutional Court, including prosecutors and other judiciary members were arrested on Wednesday, Turkish national broadcaster NTV reported. Two Constitutional Court judges, Alparslan Altan and Erdal Tercan are among them. The same day, the Turkish Defense Ministry also suspended at least 262 military judges and prosecutors.

Kuwait

In Kuwait few days ago, Eight Kuwaiti judges arrested reported Gulf News on 30 April 2021, “A total of eight Kuwaiti judges, three lawyers and six administrators in the Kuwait Appellate courts have been referred by the Public Prosecution to the Criminal Court. The convicts have been arrested after eight months of extensive investigation on suspicions of bribery, forgery and money laundering, Al Jarida reported.”

The Anadolu news agency, citing a statement from the Ankara Chief Prosecutor’s Office, reported that most of the suspects were believed to have risen to their judicial positions after benefiting from a leak of professional exam questions in 2011. Most were later dismissed from their jobs, the private Demiroren news agency said.

Over 100 members of Turkey’s Constitutional Court, including prosecutors and other judiciary members were arrested on Wednesday, Turkish national broadcaster NTV reported. Two Constitutional Court judges, Alparslan Altan and Erdal Tercan are among them.



Source
 
Advertisement

hello

Minister (2k+ posts)
کہاں گئی ترکی کے وکیلوں کی غیرت کیا وہ کالا کوٹ نہیں پہنتے انہیں نکلنا چاہیے یہ زیادتی ہے بلکہ پاکستان کہ اتنے ویلے وکیل پھڑتے ہیں انہین وہاں جانا چاہیے احتجاج کر نا چاہیے کوئی بات نہیں چار جوتیاں ہی ہیں جووہاں پڑیں گیں لیکن وہ ہوں گی تو امپوٹٹ کھا لے یہاں مرنے مارنے کے لیے نکل پرتے ہیں ترکی میں ججوں کی اتنی تو ہین ہو رہی ہے انہیں جہاز بھر کر جانا چاہیے وہ موٹی موٹی تالیاں بجاتی کورس کی صورت میں وکیلیاں ساتھ انہیں بھی لے لیں خوب ہلا شیریاں دیتی ہیں وہ بھی پلیز ساتھ لے جائیں وا وا رونق لگائیں گیں انقلاب لانے میں آسانی ہوگی اور حاجی عیسی شریف کو اس کی بیگم سمیت لے جائیں دنوں خوب ایکٹنگ کرتے ہیں اور ساتھ کرد لمبے بالوں والے کو بھی ساتھ لے جائیں اس طرح کے بہت سارے افتخار چوہدری کے چمچے کھڑچے سب ساتھ لے جائیں اور ان کو بتا دیں کہ غیرت وکیل کیا ہوتی ہے اور ہاں اعتزاز کی وہ نظم ریاست ہوگی ماں جیسی
جیسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ ضرور

کیوں کہ سنانی وہ نظم ہے اور کرنی سب کی ماں بہن ایک


 
Last edited:

A.jokhio

Minister (2k+ posts)
The recent Pakistani Supreme Court judgment in favor of Justice Feaz Easa by brother judges ignoring the commonsense rule of ‘beyond reasonable doubt’ has saddened the legal community worldwide as well as Pakistani nation. The judge and his Spanish wife failed to provide the evidence of his sources of income used in the purchasing of three properties in London. They transferred the funds to UK for the education of their children but later purchased properties as reported in their own documents. It is called misleading and misrepresentation in British law?


Justice Eassa and some of his fellow judges are too quick to criticize Armed Forces of Pakistan and agencies ranked among top 10 best in the world. However, it is a moment of shame for justice Faez Eassa and his fellow judges that Pakistani Judiciary ranked a 120th place out of 128 countries and jurisdictions worldwide according to Washington based, The World Justice Project (WJP) 2020, annual report published on 11 March 2020. The Judges and their families are above and beyond the laws of Pakistan now.

Turkey


However, in Turkey on 21 January 2021, Turkish authorities have issued arrest warrants for 44 judges and prosecutors suspected of links to the group Ankara blames for a 2016 coup attempt, corruption and cheating in examination papers.

Earlier over 100 members of Turkey’s Constitutional Court, including prosecutors and other judiciary members were arrested on Wednesday, Turkish national broadcaster NTV reported. Two Constitutional Court judges, Alparslan Altan and Erdal Tercan are among them. The same day, the Turkish Defense Ministry also suspended at least 262 military judges and prosecutors.

Kuwait

In Kuwait few days ago, Eight Kuwaiti judges arrested reported Gulf News on 30 April 2021, “A total of eight Kuwaiti judges, three lawyers and six administrators in the Kuwait Appellate courts have been referred by the Public Prosecution to the Criminal Court. The convicts have been arrested after eight months of extensive investigation on suspicions of bribery, forgery and money laundering, Al Jarida reported.”

The Anadolu news agency, citing a statement from the Ankara Chief Prosecutor’s Office, reported that most of the suspects were believed to have risen to their judicial positions after benefiting from a leak of professional exam questions in 2011. Most were later dismissed from their jobs, the private Demiroren news agency said.

Over 100 members of Turkey’s Constitutional Court, including prosecutors and other judiciary members were arrested on Wednesday, Turkish national broadcaster NTV reported. Two Constitutional Court judges, Alparslan Altan and Erdal Tercan are among them.



Source
There is no resolve other than this...corrupts must be punished...otherwise nothing left but destruction for any nation...
 

Respect

Chief Minister (5k+ posts)
Pakistan courts are even worse than turkey. But I would not advise IK to do anything like that due too PTI performance which is flop and as result economy no good. Turkey economy is strong so they can do this. Police is also better in Turkey comparison too Pakistan.
 

shafali

Minister (2k+ posts)
Ultimate responsibility lies with the Pakistani public. As Imran Khan said, he con not eradicate corruption alone. During Turkish army coup, the Turkish people came on the streets and the soldiers had to back down. In Pakistan, some politicians talk about breaking up Pakistan but Pakistani people remain asleep. God help our nation.
 

chandaa

Prime Minister (20k+ posts)
Turks tolerated inflation for 7 years but didn't leave Tayyab Urdaawan. When he came in Govt he has to call elections after 3 years, Turks gave him more votes as they knew this person will change Turkey. After 20 years in Govt look where is Turkey now. Where as in Pakistan we have a mob who think only about Cheeni, Roti, Tomatoes etc. They don't care anything else!
 

Raiwind-Destroyer

Chief Minister (5k+ posts)
Turks tolerated inflation for 7 years but didn't leave Tayyab Urdaawan. When he came in Govt he has to call elections after 3 years, Turks gave him more votes as they knew this person will change Turkey. After 20 years in Govt look where is Turkey now. Where as in Pakistan we have a mob who think only about Cheeni, Roti, Tomatoes etc. They don't care anything else!
You are right most of us pakistani think about ourselves and will do anything to achieve that hence why they like Nawaz kanjar and PPP Becuase they think like most Pakistanis if Pakistan needs real change they need to give full support to Imran khan
 

Dr Adam

Chief Minister (5k+ posts)
تھریڈ کے ٹائٹل پر تصویر دیکھ کر انسان یہ سوچنے پر مجبور ہے کہ جس طرح سے قاضی فائز عیسی کو پچھلے کافی عرصے سے سوشل میڈیا پر چوبیس گھنٹے ذلیل کیا جا رہا ہے اگر ان صاحب میں تھوڑی سی بھی عزت نفس ہوتی تو یہ اپنی کرسی کو لات مار کر گھر جا چکے ہوتے . لیکن اسلام اور اخلاقیات کے خود ساختہ ٹھیکیدار ,ان صاحب کے کنڈکٹ نے ثابت کیا ہے کہ عزت نفس نام کی کوئی چیز ان کے نزدیک سے بھی نہیں گزری . اپنے آپ کو حد درجہ ڈھیٹ، بے شرم اور گھٹیا آدمی ثابت کیا ہے اپنے آپ کو ان محترم نے
یار اتنا ڈھیٹ تو ہمارا راجہ راول بھی نہیں ہے جتنا ڈھیٹ یہ قاضی ہے
 

brohiniaz

Minister (2k+ posts)
اسلامک ریپبلک آف پاکستان کے ججز کا انصاف۔
👏
👏
👏

 

786.ng

MPA (400+ posts)
IK dose'nt have balls to do this but NS has he proved it he sacked COAS PM in 99 and attacked SC of pakistan i dont like NS but he is more courageous than IK
 

ansar_raja786

Senator (1k+ posts)
Pakistan needs to arrest election choor Niazi. Niazi has been proven theif. He stole 2018 elections. He must be punished for the future prosperity of Pakistan.
 

shafali

Minister (2k+ posts)
تھریڈ کے ٹائٹل پر تصویر دیکھ کر انسان یہ سوچنے پر مجبور ہے کہ جس طرح سے قاضی فائز عیسی کو پچھلے کافی عرصے سے سوشل میڈیا پر چوبیس گھنٹے ذلیل کیا جا رہا ہے اگر ان صاحب میں تھوڑی سی بھی عزت نفس ہوتی تو یہ اپنی کرسی کو لات مار کر گھر جا چکے ہوتے . لیکن اسلام اور اخلاقیات کے خود ساختہ ٹھیکیدار ,ان صاحب کے کنڈکٹ نے ثابت کیا ہے کہ عزت نفس نام کی کوئی چیز ان کے نزدیک سے بھی نہیں گزری . اپنے آپ کو حد درجہ ڈھیٹ، بے شرم اور گھٹیا آدمی ثابت کیا ہے اپنے آپ کو ان محترم نے
یار اتنا ڈھیٹ تو ہمارا راجہ راول بھی نہیں ہے جتنا ڈھیٹ یہ قاضی ہے

یار اتنا ڈھیٹ تو ہمارا راجہ راول بھی نہیں ہے جتنا ڈھیٹ یہ قاضی ہے
😀 😄
 

ansar_raja786

Senator (1k+ posts)

یار اتنا ڈھیٹ تو ہمارا راجہ راول بھی نہیں ہے جتنا ڈھیٹ یہ قاضی ہے
😀 😄
قاضی تو با عزت بری ہو گیا اب یہ قاضی تمہیں ہر روز رولائے گا۔ تم نیازیوں کو آجکل ہر طرف سے چھتر پڑ رہے ہیں۔
بجائے خاموش اور شرمندہ ہونے کے پھر فورم پر چولیں مارنے کے لئے آ جاتے ہو۔ کتنے ڈھیٹ ہو تم لوگ۔
کتنی ڈھٹائی سے بات کرتے ہو !
 

shafali

Minister (2k+ posts)
Rawal ka chotu Ansar raja ko mat bhoolna.
بالکل ٹھیک کہا۔ ویسے بڑے راجہ سے کبھی کبھار مزاق ہو جاتا ہے لیکن چھوٹے راجہ کچھ زیادہ ہی ٹینشن لیتے ہیں۔
 

Haha

MPA (400+ posts)
Real face of Qazi Easa
غدار باپ کا کرپٹ بیٹا
یاد رہے کہ تاریخ جھوٹ نہیں بولتی۔
قیام پاکستان کے کچھ علاقوں میں عوامی ریفرینڈم کروانے کا فیصلہ کیا گیا جس میں عوام کی اکثریت نے پاکستان کے ساتھ الحاق کو ترجیح دی۔ بلوچستان میں البتہ گوروں نے یہ اصول اپنانے سے انکار کردیا، کیونکہ انگریز چاہتا تھا کہ بلوچستان آزاد حیثیت میں قائم رہے تاکہ برصغیر سے انخلا کے فوری بعد انگریز اپنی گورننس وہاں منتقل کردے اور پھر وہاں بیٹھ کر بتدریج خطے کا کنٹرول دوبارہ حاصل کرسکے۔ چنانچہ بلوچستان میں عوامی ریفرنڈم کی بجائے وہاں کے شاہی جرگے کے اکثریتی ووٹ کی بنا پر فیصلہ کرنے کا اعلان کردیا گیا۔
یہ نہایت حساس معاملہ تھا، اگر شاہی جرگہ الحاق پاکستان سے انکار کردیتا تو پاکستان کی جغرافیائی پوزیشن بہت کمزور ہوجاتی۔
شاہی جرگے کے متعلق جان لیں۔ بلوچستان کے کچھ علاقے بشمول کوئٹہ، پشتین تو برطانوی ریاست کے زیرانتظام تھے، لیکن دوسرے علاقے بشمول ریاست قلات، ریاست خاران، ریاست مکران، ریاست لسبیلہ وغیرہ آزاد ہوا کرتے تھے۔ بلوچستان کے معاملات چلانے کیلئے انگریز نے ان علاقوں کے قبائلی سرداروں پر مشتمل ایک جرگہ بنا رکھا تھا جسے شاہی جرگہ کہا جاتا تھا جس کا صدر ایجنٹ ٹو گورنر جنرل آف برٹش انڈیا ہوتا تھا اور عام طور پر انگریز کا وفادار سمجھا جاتا تھا۔
جب الحاق پاکستان کا معاملہ شاہی جرگہ میں جانے کا فیصلہ ہوا تو کانگریس اور انگریزوں کو اطمینان ہوچکا تھا کہ جرگے کا اکثریتی فیصلہ ان کی مرضی کے مطابق آئے گا۔ یہ صورتحال چند قبائلی لیڈروں کیلئے قابل قبول نہ تھی کیونکہ وہ پاکستان کے ساتھ الحاق چاہتے تھے۔
اس وقت کاکڑ قبیلے کے سربراہ نواب محمد خان جوگیزئی آگے بڑھے اور انہوں نے اپنے ہم خیال قبائلی لیڈروں کو ساتھ ملا کر پاکستان کے حق میں مہم شروع کردی۔ دوسری طرف عبدالصمد اچکزئی بباہنگ دہل کانگریس کی حمایت میں سامنے آگئے اور قیام پاکستان کی مخالفت کرتے ہوئے لابنگ شروع کردی۔
نواب جوگیزئی کا ساتھ دینے کیلئے جمالی قبیلے کے میر جعفر خان جمالی آگے آئے اور انہوں نے بھی پاکستان کے حق میں کیمپین شروع کردی۔
دوسری طرف عبدالصمد اچکزئی نے جرگہ کے سرداروں سے کہنا شروع کردیا کہ اگر پاکستان کے ساتھ نہیں جاتے تو ہندوستان کی حکومت جرگہ کو فی الفور 18 کروڑ روپے نقد اور سالانہ ساڑھے چار کروڑ روپے بطور سپورٹ فنڈ دیا کرے گی۔ اتنی پرکشش آفر سن کر بہت سے سرداروں کا فیصلہ ڈگمگا سکتا تھا، چنانچہ نواب جوگیزئی اور جمالی نے بھرپور کیمپین شروع کی اور ہر سردار کے پاس جاکر قیام پاکستان کے حق میں ووٹ دینے کی سفارش کرنا شروع کردی۔
جس وقت نواب جوگیزئی، جمالی اور نسیم حجازی جیسے لوگ شاہی جرگہ کے اراکین کو پاکستان کیلئے قائل کرنے کی کوشش کررہے تھے، عین اسی وقت مسلم لیگ بلوچستان کے صوبائی صدر نے شاہی جرگہ کے صدر، ایجنٹ ٹو گورنر جنرل سے اپیل کی کہ شاہی جرگہ سے قلات، کاکڑ اور جمالی قبائل کے سرداروں کو نکال دیا جائے۔ یہ مطالبہ حیران کن تھا، کیونکہ اگر ان سرداروں کو نکال دیا جاتا تو پھر قیام پاکستان کے حق میں ووٹ ڈالنے والا کوئی نہ رہتا۔
ریفرینڈم کی تاریخ 29 جون کو طے ہوئی تھی اور اس وقت تک نواب جوگیزئی اپنے ساتھ اچھی خاصی حمایت اکٹھی کرچکے تھے۔ لیکن بلوچستان مسلم لیگ کے صوبائی صدر کی درخواست کا جائزہ لینے کیلئے شاہی جرگہ صدر نے 28 جون کی رات اعلان کردیا کہ 29 جون کے اجلاس میں صرف وائسرائے کا پیغام پڑھ کر سنایا جائے گا، اور ووٹ 3 جولائی کو ڈالا جائے گا۔ اس کا مقصد یہ تھا کہ اگلے چند دنوں کے اندر جرگہ کی کمپوزیشن تبدیل کی جاسکے۔
نواب جوگیزئی، نسیم حجازی اور جمالی کو سازش کی بھنک پڑچکی تھی، چنانچہ انہوں نے فیصلہ کیا کہ اگلے دن وائسرائے کا پیغام پڑھنے کے فوراً سب قبائلی سردار کھڑے ہوکر پاکستان میں شمولیت کا اعلان کردیں گے۔
اگلے دن 29 جون کو اجلاس شروع ہوا، وائسرائے کا پیغام پڑھا گیا اور اس کے فوراً بعد جوگیزئی، جمالی، کاکڑ اور دوسرے قبائل کے سرداران اپنی جگہ سے کھڑے ہوئے اور اعلان کردیا کہ وہ پاکستان میں شمولیت چاہتے ہیں۔
65 کے جرگے میں 40 سے زائد سرداران نے جب یہ اعلان کردیا تو پھر 3 جولائی کے اجلاس کی اہمیت ختم ہوگئی اور یوں بلوچستان اللہ کی مہربانی سے پاکستان کا حصہ بن گیا۔
جاننا چاہیں گے کہ مسلم لیگ بلوچستان کا صوبائی صدر کون تھا جس نے شاہی جرگہ سے پاکستان کے حامی سرداروں کو نکالنے کی سفارش کی؟
اس کا نام قاضی عیسیٰ تھا جو کہ سپریم کورٹ کے موجودہ جج قاضی فائز عیسی کا باپ ہے۔ جی ہاں، وہی قاضی فائز عیسیٰ کہ جس کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ تحریک پاکستان کے فرزند کا بیٹا ہے، درحقیقت قاضی عیسیٰ ایک خودپسند، اناپرست شخص تھا جس نے اپنی ذاتی خواہشات کی وجہ سے پورے بلوچستان کی شمولیت خطرے میں ڈال دی تھی۔
اوپر بیان کئے گئے واقعات تاریخ کا حصہ ہیں۔
آخر میں سلام ان بلوچ لیڈروں کو، جنہوں نے 1947 میں کروڑوں کی آفرز ٹھکرا کر پاکستان میں شمولیت کا فیصلہ کیا۔
قاضی عیسیٰ ان بلوچ اور پختون لیڈروں کی دھول کے برابر بھی نہیں!!!
منقول
مصنف قیوم نظامی
کتاب:قائد اعظم بحیثیت گورنر جرنل
Posted as received
 
Sponsored Link

Featured Discussion Latest Blogs اردوخبریں