پیدل عدالت آنیوالے جج کو روکنا بھی توہین عدالت ہو گی: سپریم کورٹ

SP-court-pak.jpg


سپریم کورٹ نے سابق چیف جسٹس پاکستان (ر) جسٹس افتخار چوہدری بدسلوکی کیس میں سابق کمشنر اور ڈپٹی کمشنر اسلام آباد کی سزاؤں پر دائر نظرثانی درخواستیں خارج کر دیں۔

عدالت نے سابق چیف جسٹس سے بدسلوکی کے کیس میں سزائیں پانے والے سابق آئی جی، ایس پی و دیگر پولیس اہلکاروں کی التوا کی درخواستیں منظور کر لی ہیں۔سپریم کورٹ نے واضح کیا ہے کہ کوئی جج پیدل عدالت آنا چاہے تو اس کے ساتھ بدسلوکی توہین عدالت ہوگی۔

گزشتہ روز ہونے والی سماعت میں چیف جسٹس گلزار احمد کی سربراہی میں پانچ رکنی بینچ نے سابق چیف جسٹس افتخار چوہدری کے ساتھ بدسلوکی کے معاملہ پر سزائیں پانے والے افسران کی سزائوں کیخلاف دائر نظرثانی درخواستوں پر سماعت کی۔ چیف جسٹس نے کہا کہ کوئی بھی جج صاحب کے ساتھ پیدل نہ آنے کیلئے زبردستی نہیں کر سکتا۔

دوران سماعت چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ ہمارے ایک جج صاحب روزانہ پیدل عدالت آتے ہیں، کوئی بھی جج صاحب کے ساتھ پیدل نہ آنے کیلئے زبردستی نہیں کر سکتا۔ کوئی خود اپنی جان پر رسک لینا چاہتا ہے تو اس کے ساتھ زبردستی نہیں ہو سکتی، آفس سے پیدل گھر کیلئے نکلوں تو کیا مجھے بھی زبردستی گاڑی میں ڈالیں گے؟
 
Advertisement

Young_Blood

Minister (2k+ posts)
Daro uss din se jab tum ALLAH ke pakar mein aa jao gay.. Uss din phir yehi awaam tumhare qissey sunaein ge apni aainda aane wali naslo ko, tum se pehle b bohat bare bare zameeni Khuda ibrat ka nishaan bnaa diay gay, aur aaj hum un k kisse kahania suntey hein, Ye duniya makafat e amal hai Sahib, tum nahi to tumhari uladein zaroor tumhare amaal ka nuqsan uthaein ge..
Insaf Zero.. batein aisi k Hazrat Omar RA b wah wah karte, Implement sifar, akhir kab tak ameero ke pocket k romaal bun k raho gay,,
 

tahirmajid

Minister (2k+ posts)
Supreme Court ko chahiey keh judges ko Farishta declear kar dein or jo koi in ki kisi bhi tarha toheen karey us ko forun Saza-e-Mout dein.
 
Sponsored Link